بربریت کی نہ دیکھی اک مثال

Poet: azharm
By: azharm, doha

 بربریت کی نہ دیکھی اک مثال
شرم سے شیطاں کے عارض تھے گُلال

شرم خارج کو نہ کوئی آئی تھی
خوں بہا کر ہو گیا جیسے نہال

جانور تُجھ سے ہیں بہتر خارجی
ہاتھ بچوں پر اُٹھے کس کی مجال

کیوں محافظ جان پائے ہی نہیں
بھیڑئیے تھے انس کی پہنے تھے کھال

دفن کر دے بھیڑیوں کو، کھا نہ لیں
تیرے بچے، چل اُٹھا لے تُو کُدال

مانتا ہوں جو گئے ہیں، سب شہید
بھولنا مت کیوں ہوا لیکن وصال

ہیجڑوں کی فوج ہی بھرتی نہ کر
ڈھونڈھ بستی میں کہیں ہوں گے رجال

اس مُصیبت سے نکلنا ہے تو سُن
سانپ اپنی آستینوں سے نکال

دوسروں کی جاں بچانے چل پڑا
چل پلٹ اپنی کہیں پہلے سنبھال

آگہی اسباب کی ہے ناگزیر
قوم پر آیا تھا کیسے، کیوں زوال

کُچھ خُدا کا خوف کر اظہر کہیں
کیا بنے گا، آ گیا اُس کو جلال
 

Rate it:
16 Dec, 2014

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: azharm
Simply another mazdoor in the Gulf looking 4 daily wages .. View More
Visit 179 Other Poetries by azharm »

Reviews & Comments

اظہر بھائی،
بیشک یہ لوگ فتنہء خوارج ہی کی باقیات ہیں جن کے نزدیک اُن کا ہر اِک عمل خواہ وہ کیسی ہی بربریت لئے ہوئے ہو دین ہے۔ ایسے خوارج کے خلاف آواز اٹھانا وقت کا فیصلہ ہے۔ آپ نے ماشاءاللہ بہت عمدہ کلام لکھا ہے۔

By: Sarwar Farhan Sarwar, Karachi on Dec, 27 2014

bohat shukriya janab Sarwar sahib
By: azharm, Rawalpindi on Dec, 31 2014

Be shakk is se barri Aur koi barbariyat ki misal ho bhi
Nahin sakti.
HAR dil khoon ke aansoo ro raha hai.
Khuda hum sub ko sabr e jameel atta karey.
Azharam
I'd dukh main hum sub bhi shareek hain.
JazaakAllah

By: Azra Naz, Reading UK on Dec, 19 2014

yeh shayed Bangladesh kay baad ka sub say bara saniha hai g
By: azharm, Rawalpindi on Dec, 21 2014
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City