بیٹھے بیٹھے کوئی خیال آیا

Poet: Rahat Indori
By: sonam, khi

بیٹھے بیٹھے کوئی خیال آیا
زندہ رہنے کا پھر سوال آیا

کون دریاؤں کا حساب رکھے
نیکیاں نیکیوں میں ڈال آیا

زندگی کس طرح گزارتے ہیں
زندگی بھر نہ یہ کمال آیا

جھوٹ بولا ہے کوئی آئینہ
ورنہ پتھر میں کیسے بال آیا

وہ جو دو گز زمیں تھی میرے نام
آسماں کی طرف اچھال آیا

کیوں یہ سیلاب سا ہے آنکھوں میں
مسکرائے تھے ہم خیال آیا

Rate it:
07 Mar, 2019

More Rahat Indori Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>