تذکرہ

Poet: حازق علی
By: Hazik Ali, Multan

اب کرنے لگا ہوں میں تزکرہ جو ہو سکے تو سن زرا
خوشیوں کے بدلے اپنی ہے میرے دامن میں غم بھرا

کیا خطا میری جو یوں کیا،کیا وفا تیری یہ کیوں کیا
وہ شخص جو منزل پے تھا اب نا جانے ہے کہاں کھڑا

جو اب کوئی تیرا زکر کرے یا سامنے تیری فکر کرے
بحث اس سے بے حساب ہو اکثر تو ہوں میں لڑ پڑا

تجھے درد ہوگا تو رو دے گا وقت ایسے زخم بو دے گا
زرا رہم بھی تجھ پے نا جائز ہوگا گناہ ہے تیرا بہت بڑا

اسکی محبت پر تو ایمان تھا فقط حازق وہی جان تھا
یہ کہانی ہے اس سفر کی جسکے آخر میں میں گر پڑا

Rate it:
31 Oct, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Hazik Ali
Visit 13 Other Poetries by Hazik Ali »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City