ترکِ الفت

Poet: (بختاور شہزادی(بلبل سفیر
By: BAKHTAWAR SHEHZADI, GUJRAT

آنکھوں میں اشکوں کی صداقت ہے میرے
بھلے ہی ترکِ الفت کا کہ آئے ہیں تجھے

تجھ سے جدائی کا اندیشہ بھی رہا ہے مجھے
اور نہیں تو بیاض میں پا لوں گا تجھے

درشتی سے بات کا شعار بھی ہے مجھے
بھلے ہی کہ دو روش بدل گئے ہیں تیرے

زخم و مرہم بھول جاتے ہیں مجھے
دمِ تحریر رکھتے ہیں جب بھی ہم تجھے

کسک دل میں باقی رہے گی ہاں میرے
دے دیں گے دارو دیوان بھی ہم تجھے

پاس رکھے جو, تیری خوشبو سے لگاؤ ہو گیا تھا مجھے
وہ گلاب وہ کیسر بھی دے دیں گے ہم تجھے

رمَق باقی ہے, اک آسرا تنہائی کا ہے مجھے
گرامی نامہ جلد ہی مل جائے گا تجھے

Rate it:
13 Mar, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: BAKHTAWAR SHEHZADI
Visit Other Poetries by BAKHTAWAR SHEHZADI »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City