تنہائیاں تو دیکھو، کب سے پکار تی ہیں

Poet: زاہد
By: زاہد, Karachi

تنہائیاں تو دیکھو، کب سے پکار تی ہیں
بیساکھیاں سہاروں کی ، کب نکھارتی ہیں

گھڑلو کوئی کہانی ، ہمارے گناہ کی پھر
ہرزہ سرائیاں ہی ، جلسے سنوارتی ہیں

رکھی نہ ہم نے جگ سے ، کوئی امید باقی
خودداریاں ہمارے ، صد قے ا تار تی ہیں

دشمن کے وار کی تو، پرواہ بھی نہیں ہے
خاموشیاں ہمیشہ , اپنوں کی مار تی ہیں

سچ سننا , جو گوارا کرتے نہیں, کسی کا
زاہد نصیحتیں کب ، اُنہیں سدھار تی ہیں

 

Rate it:
09 Mar, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: زاہد
Visit Other Poetries by زاہد »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City