تنہائی

Poet: عباد راشد
By: عباد راشد, کراچی

ہم اتنے تنہا تنہا ہیں کہ ہم سا
تنہا اورجہاں میں کیا ہوگا

یہ سوچ کہ تنہا تنہائی کو
یوں دور بھگا تے ہیں اکثر
کہ ہم سا تنہا دور جہاں میں
اور بھی کوئی کیا ہوگا

تمہیں کس نے کہا میں تنہا ہوں
میرے سنگ جیتا ہے میرا من
میرے من میں اُس کی یادیں
سنگ اور میرے اب کیاہوگا

اندھیر میں اک پرچھائی ہے
اور بھیڑ میں اک تنہائی ہے
جب آنکھ میری بھر آئی ہے
تب اور غزب اب کیا ہوگا

رب اب تو مجھے آزادی دے
اس تنہائی کی محفل سے
تنہائی نہیں اک قاتل ہے یہ
اب جاں کا میرے کیا ہوگا

Rate it:
17 Oct, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: عباد راشد
Visit Other Poetries by عباد راشد »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City