تیری غفلتوں کو خبر نہیں

Poet: Rimi
By: Rimi,

تیری غفلتوں کو خبر نہیں
میری زندگی کا سوال ہے
تجھے دیکھے بن جو جی لیے
انہی لمحوں کا ملال ہے

تیرے لمس کی ہے آرزو
تیری دید کی ہے تشنگی
کبھی کہیں سے تو آ کے مل مجھے
ابھی ملنے کا جواز ہے

کوئی گیت ایسا گنگنا
کوئی راگ ایسا چھیڑ دے
میری روح کے تار کو دیکھنا
تیری سر کا اب کمال ہے

تو جو بچھڑ گیا مجھے غم نہیں
تو ملا نہیں یہ ستم نہیں
میں جو جی رہا ہوں ابھی تلک
یہ سوچنا ہی محال ہے

اب لوٹ بھی آؤ کہ تیرے بن
کوئی خوشی نہ مجھ کو راس ہے
آہ! کاش میں بھی کہہ سکوں
آج مریض عشق بحال ہے
آج مریض عشق بحال ہے

Rate it:
31 Jul, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Rimi
Visit 10 Other Poetries by Rimi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City