خوابوں سے نہ جاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

Poet: Sabir Dutt
By: Danish, Lahore

خوابوں سے نہ جاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

پہلو میں تم آؤ کہ ابھی رات بہت ہے

جی بھر کے تمہیں دیکھ لوں تسکین ہو کچھ تو

مت شمع بجھاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

کب پو پھٹے کب رات کٹے کون یہ جانے

مت چھوڑ کے جاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

رہنے دو ابھی چاند سا چہرہ مرے آگے

مے اور پلاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

کٹ جائے یوں ہی پیار کی باتوں میں ہر اک پل

کچھ جاگو جگاؤ کہ ابھی رات بہت ہے

Rate it:
14 Jan, 2021

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Hamariweb
Visit Other Poetries by Hamariweb »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City