خواب سونے نہیں دیتے

Poet: Muhammad Amir Sultani
By: Muhammad Amir , Kotli

آنکھوں کے گِرے گواہ ہیں کہ یہ خواب سونے نہیں دیتے
منتظر ہیں اک جھلک کو کہ آنکھ اب بند کرنے نہیں دیتے

ارتحال کو جو رواں ہوں دل پاوُں سے لپٹ جاتا ہے
اب میرے حواس بھی تیرے شہر سے جانے نہیں دیتے

یوں تو پورا ہی شہر لیلیٰ مجنوں پے رشک کرتا ہے
مجھے اس کی گلی میں یہ لوگ کیوں جانے نہیں دیتے

سنا ہے چاند بھی اب اس کا پہرہ دیتا ہے رات بھر۔
تارے بھی اس کے صحن سے کسی کو گزرنے نہیں دیتے

سہل جائیں گے سبھی کڑے امتحان بھی بندشوں کے
قفسِ قید سے جو مجھے اس کی طرف جانے نہیں دیتے

لاحاصل ہی رہا عمر بھر ہمیں اک نظر کا دیدار
رخ یار سے اب میرے پاوُں بھی پلٹنے نہیں دیتے

ضم کر گئی مجھ میں اب تیرے شہر کی رعنائی
رات ہوتے ہی یہ جگنوں مجھے اب کہیں جانے نہیں دیتے

اس کے شہر کے لوگوں میں بھی اسی کے رنگ ہیں عامرٓ
اس کا ہو کہ بھی اس کے قصے اب سنانے نہیں دیتے

Rate it:
07 Dec, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Amir
Visit 4 Other Poetries by Muhammad Amir »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City