خوشی

Poet: عبیر کاظمی
By: Abeer Kazmi, Melbourne

خوشی کی داستاں کوئی نہیں ہے
محبت ہے وفا کوئی نہیں ہے

جہاں ہر پل نمی آنکھوں میں ٹھہرے
وہاں نوحہ کناں کوئی نہیں ہے

یہی تو ظلم ہے میرے نگر میں
بیاں ہے ! پر زباں کوئی نہیں ہے

جہاں انسانیت ہے شرطّ ِ اوّل
وہاں انساں نما کوئی نہیں ہے

خوشی میری مخاطب یوں ہے مجھ سے
جہاں میں ہوں وہاں کوئی نہیں ہے

ہوا یہ تجربہ طغیانیوں کا
خدا ہے ! ناخدا کوئی نہیں ہے

مصیبت سر پہ میرے ہاتھ رکھ کر
یہ کہتی ہے میرا کوئی نہیں ہے

یہاں ہر سمت رسم ِ خوں ہے رقصاں
ہیاں رسم ِ حنا کوئی نہیں ہے

عبیر ِ آشنا سے کہ دو جا کر
گلستاں میں بچا کوئی نہیں ہے

Rate it:
20 Jul, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Abeer Kazmi
Visit Other Poetries by Abeer Kazmi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City