خیال ہے کیا اک سودا سر ء عام کرو گے

Poet: سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی
By: سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی, فیصل آباد, پنجاب, پاکستان

خیال ہے کیا اک سودا سر ء عام کرو گے
لے کے محبت وفا میرے نام کرو گے

ہر صبح کسی پھول کی خوشبو کی طرح
چاند کی مثل روشن میری شام کرو گے

بسا کے رکھو گے اپنی نگاہوں میں سدا
میرے دل میں کیا تم قیام کرو گے

آتش ء عشق میں ہر لمحہ جلنا ہو گا
بولو کیا تم بھی یہ کام کرو گے

یہ تغافل یہ رقابت یہ بے اعنائی تیری
محبت کو کتنا تم بدنام کرو گے

کرو گے جب تم الفت میں خساروں کا حساب
خود کو لازم ہے کہ برسر ء الزام کرو گے

صرف ء نظر ممکن نہ رہے گا تم پر
میرا ذکر میرے بعد سر ء عام کرو گے

منتظر ہے بزم میں سخن ور عنبر
کب بات دل کی تم لب ء بام کرو گے

Rate it:
06 Mar, 2017

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی
Visit 735 Other Poetries by سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City