داغ ِ دل یوں تو بہت تھے

Poet: wasim ahmad moghal
By: wasim ahmad moghal, lahore

داغِ دل یوں تو بہت تھے ایک بھی شُعلہ نہ تھا
یعنی قسمت میں ہماری حُسن کا جلوہ نہ ۔۔۔تھا

بار ہا دیکھا ہے ہم نے چودھویں کے چاند ۔۔کو
آپ کے چہرے سے بڑھ کر چاند کا چہرہ نہ تھا

اِک جہنّم زار تھی دنیا مگر ایسی نہ۔۔۔۔۔ تھی
تُو بچھڑ جائے گا مجھ سے یہ کبھی سُوچانہ۔۔ تھا

کھینچ کر بازارِ رُسوائی میں لے آئے۔۔۔ مجھے
اور بھی تھے اُس گلی میں میں ہی اِک تنہا نہ تھا

حالِ دل اُن کو سُنانے کا نہیں تھا ۔۔۔حوصلہ
اُن کے دل پر کیا گزرتی ہے کبھی پوچھا نہ تھا

زندگی خوشبو کی مانند اُڑ گئی اپنی۔۔۔۔ وسیم
اور گلشن آرزؤں کا ابھی مہکا نہ ۔۔۔۔۔تھا
 

Rate it:
29 Nov, 2013

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: wasim ahmad moghal
Visit 168 Other Poetries by wasim ahmad moghal »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

وسیم آپ کی شاعری پرھنے کا اتفاق ہوا اور
یہ ایک حسین اتفاق ثابت ہوا۔ایک اچھی غزل کی
تخلیق پر بہت داد وصول فرمائیں اور ہمیشہ خوش رہیں
پیارے بھائی

By: Dr.Zahid Sheikh, Lahore Pakistan on Dec, 01 2013

بہت خوب وسیم بھائی۔۔۔
نہائت عمدہ شاعری۔۔دل کو چھو لینے والے موضوعات
کا احاطہ کرتی ہوئی ایک نہائت عمدہ غزل۔۔۔
فریع کا گیت یاد آ گیا۔۔
میں نے پوچھا چاند سے کہ دیکھا ہے کہیں
میرے یار سا حسیں
چاند نے کہا چاندنی کی قسم
نہیں نہیں نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہمیشہ خوش رہیں اور ایسے ہی اچھا اچھا لکھتے رہیں۔۔۔بہت ساری دعائیں
نیک تمنائیں

By: muhammad nawaz, Sanglahill on Dec, 01 2013

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City