دو دن کا بازیچہ

Poet: درخشندہ
By: Darakhshanda, Houston

 صبح کاذب کو شام کے سحر میں ڈھلتے دیکھا
تیرے روپ کو خاموشی سے اس تغیر سے گزرتے دیکھا

گردش دوراں میں تجھ کو بے آب و دانہ بھٹکتے دیکھا
کبھی قوس قزاح میں تیرے حسن کو نکھرتے دیکھا

جو ڈوب رہے تھے تجھ کو پانے کی خواہش نیرنگ میں
انکی چاہت کے انجام کو تیری آغوش میں بے رنگ دیکھا

لا ریب تو گوہر نا یا ب ہی سہی مگر دو دن کا ہے بازیچہ
یہا ں تیرے حاصل کا انت بھی یوں لا حاصل ہی دیکھا

گر تو زہر قاتل نہیں تو یوں اجل بھی تو با طل نہیں
لمحہ با لمحہ کھیل میں زندگی کو ہی بازی ہارتے دیکھا

Rate it:
13 Oct, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Darakhshanda
Penning my thoughts on life through poetic expression. All praise is for God who blessed me the ability to write.

.. View More
Visit 93 Other Poetries by Darakhshanda »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City