دُشمَنی مول لی زمانے کی

Poet: مرید باقر انصاری
By: مرید باقر انصاری, میانوالی

دُشمَنی مول لی زمانے کی
کی تھی کوشش جو مسکرانے کی

سارا ہی شہر اب مخالف ہے
کوئ جاہ ہے نا سِر چھپانے کی

کتنی بار اُس کو تم مناؤ گے
جِس کو عادت ہے روٹھ جانے کی

ڈوب جاؤں نا میں شرابوں میں
شاہی مجھکو نا دے میخانے کی

اِس لیۓ درد و غم کا عادی ہوں
اُس کی عادت تھی دل جلانے کی

شام ہوتے ہی ہر پرندے کو
یاد آتی ہے آشیانے کی

سارے ہی میکدے جو کھل گۓ ہیں
دھوم ہے پھر بہار آنے کی

شاید آ جاۓ لوٹ کر باقرؔ
اُس کو جلدی نا کر بُھلانے کی

Rate it:
21 Apr, 2015

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: مرید باقر انصاری
Visit 213 Other Poetries by مرید باقر انصاری »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City