ساال نو

Poet: ضیغم ر قریشی
By: Zaigham R. Qureshi, London

بہت امید تھی ، بہت انتظار تھا
ہر اک پل صرف ترا طلبگار تھا
راہ میں نگاہیں تھیں ہم نے بچھائیں
پلک جھپک کے جو کرنا دیدار تھا

اب آئے ہو تو کس شان سے
کس گھمنڈ سے ، کس مان سے
ہوا جن کا برپا شور ہے
بس ان کا حکم سرکار تھا ؟

ہے تم نے بہت ستایا ہمیں
ہے راتوں کو ڈرایا ہمیں
یہ جو چہروں پے اب خوف ہے
تیری وحشت کا علمبردار تھا

لڑتے غفلت سے اب ہوں جھک گیا
کچھ سوچ سمجھ کے اب ہوں رک گیا
آفت ہے نہیں تو اور ہے یہ کیا
سوچ میں مری تو دلدار تھا

سال نو تو آتے ہیں خوشی لے کر
بدلتے رنگوں میں چھپی ہنسی لے کر
کیا ڈھونڈ رہے ہو ویرانے دل میں مرے
وہ اور کچھ نہیں بس ٹوٹا مینار تھا

بیماری ہے یہ کیسی جلدی سے چھوٹ جائے
رفتار اس حقیقت کی خدا گر ٹوٹ جائے
اب سوچتا ہوں ضیغم یہ وقت گزر جائے گا
کہیں تیزی سے آیا فقط گردوغبار تھا

Rate it:
03 Jun, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zaigham R. Qureshi
Visit Other Poetries by Zaigham R. Qureshi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City