شکوہ

Poet: Usman Arif
By: Usman Arif, Lahore

لکھنے بیٹھا تو لکھا نہیں
جو لکھ دیا اُس نے پھر وہ کبھی مٹا نہیں
مجھ کو شکوہ ہے خود سے جو کیا وہ پورا ہوا نہیں
جو کروایا گیا وہ کیا نہیں
سب کہتے ہیں تم کو کچھ خبر نہیں
کیا کرنا ہے آگے کچھ تم نے سوچا نہیں
میں ہنستا ہوں مسکراتا ہوں
پھر کہتا ہوں جو کروانا ہے آپ نے وہ مجھ سے ہونا نہیں
جو میں کہتا ہوں وہ آپ نے کرنا نہیں
اس کے آگے کیا لکھوں کچھ اس کا علم نہیں
ہاں جو پتا ہے وہ لکھنا نہیں

Rate it:
20 Feb, 2020

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Usman Arif
Visit 44 Other Poetries by Usman Arif »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City