غربت نے لے لی جان پر تمہیں اس سے کیا

Poet: عنیزہ
By: Oniza, Karachi

وہ بھوکا ہے کل شام سے پر تمہیں اس سے کیا
وہ بیٹا تو نہیں تمہارا تمہیں اس سے کیا

مرجاۓ گا وہ سردی سے اک کمبل کی تلاش میں
پر وہ بھاٸی تو نہیں تمہارا تمہیں اس سے کیا

وہ بھٹکتا رہے گا رات بھر رزق کی تلاش میں
وہ جاۓ گا نہ گھر یہ خالی ہاتھ لیے

کہ بیٹھا ہے کوٸی وہاں اس کا منتظر ہوۓ
کسی کی امید ہے وہ ناجانے کتنی دیر سے

بلاتی ہے اسکو بابا اک ننھی سی گڑیا
لپٹ جاتی ہے سینے سے وہ دوڑتی ہوٸی

ہے ننھی جگمگاتی آنکھوں کی وہ امید
کہیں مر نہ جاۓ بھوکی وہ ننھی سی گڑیا

ہے مانگتا وہ روٹی نہ دینا تم اسے
اک بھکاری سمجھ کے جھڑک دینا تم اسے

مرجاۓ وہ بھوکا تو تمہیں اس سے کیا
مرجاۓ گی گر ننھی پری تو تمہیں اس سے کیا

وہ بیٹی تو نہیں تمہاری
پھر تمہیں اس سے کیا

Rate it:
17 Dec, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Oniza
Visit 3 Other Poetries by Oniza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City