غزلوں میں غم و درد کا رس گھولنے والا

Poet: مرید باقر انصاری
By: مرید باقر انصاری, Karachi

غزلوں میں غم و درد کا رس گھولنے والا
شاعر ہو تو پریوں کے بھی پر تولنے والا

وہ گھر سے جو نکلے تو معطّر ہو فضا بھی
خلوت میں وہ خُوشبو کی رسن کھولنے والا

دنیا میں ہُنر چہرہ شناسی کا بہت ہے
ہو کوئی تو دل میں چُھپے غم پھولنے والا

آواز دبا دیتا ہے مُفلس کی ہمیشہ
میزان عدالت کا یہاں تولنے والا

مے وہ ہے جو بھٹکے ہُوؤں کو رستہ دکھاۓ
ہوتا نہیں میخار کبھی ڈولنے والا

چُپ کیوں ہے مجھے تخت پہ بیٹھا ہُوا پا کر
خستہ میری حالت پہ بہت بولنے والا

باقرؔ وہ خریدے گا کبھی سارے جہاں کو
صحرا میں چُھپے ہیرے گُہر رولنے والا

مُـــــــــــــرید بــــــــــــاقرؔ انصـــــــــــاری
.
.

Rate it:
21 Mar, 2017

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: مرید باقر انصاری
Visit 213 Other Poetries by مرید باقر انصاری »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City