غموں نے کی ہے سازش انتقام لے رہے ہیں

Poet: Madni ali
By: Madni Ali, Multan

غموں نے کی ہے سازش انتقام لے رہے ہیں
ہے انتقام کی یہ حد،صبح شام لے رہے ہیں

اِک تو ہے کہ ہمارا نام مٹانے پر تلا ہوا ہے
اِک ہم ہیں کہ ہر حال تیرا نام لے رہے ہیں

دُکھوں کو پاس رکھنا اور سینے میں بسانا
تیری چاہتوں کے جذبے ہم سے یہ کام لے رہے ہیں

کہاں ملے گی منزل ہم مسافروں کو اِس طرح سے
تھوڑا آغاز لے رہے ہیں تھوڑا انجام لے رہے ہیں

میخانہ ہوا بے اثر،مے کشی بھی بے اثر ہے
رندوں سے پہلے ساقی،خود جام لے رہے ہیں

تیرے نام لیواؤں کا بھی عجب انداز ہے یہ
جو صبح کو نا لے سکے سرِ شام لے رہے ہیں

محبتوں کی سودے بازی اب عروج پر رہے گی
ہم ایک ہی دام کے بدلے کئی دام لے رہے ہیں

ہوئی ہے پتھروں کی بارش اور کیا بتاؤں علی
تیرے نام کا ہر دور میں هم الزام لے رہے ہیں

Rate it:
09 Jul, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Madni Ali
Visit 3 Other Poetries by Madni Ali »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City