محبّت کا جنوں ہوا تمام اور ترک تعلق تک بات آ پہنچی ہے

Poet: H.M. Salman Amin
By: H.M. Salman Amin,

محبّت کا جنوں ہوا تمام اور ترک تعلق تک بات آ پہنچی ہے
کتنا گہرا تعلق تھا ہمارا مگر کہاں تک بات آ پہنچی ہے

پہلے نیند نہ آتی تھی ان کی نازک بانہوں کے حصار بن
آج نام بھی گوارا نہیں ان کا یہاں تک بات آ پہنچی ہے

فدا تھے ہم ان پہ دل و جاں سے اور مانتے تھے انکی ہر اک بات
مگر ان کی یادوں کو اپنی زندگی سے مٹانے تک بات آ پہنچی ہے

پہلے سوچتے تھے کیسے گزرے گی ہماری زندگی انکے بغیر
آج انکی پرانی تصویروں کو جلانے تک بات آ پہنچی ہے

لوگ پوچھتے ہیں ایسا کیا ہوا تھا آخر ہمارے درمیاں
کیسے بتاؤں انکی ضد کی وجہ سے جدائی تک بات آ پہنچی ہے

اے سلمان اگر وہ خوش ہے تیرے بغیر بھی تو کیا ھوا
اب تو کسی اور سے دل لگانے تک بات آ پہنچی ہے

Rate it:
26 Mar, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: H.M. Salman Amin
Visit 13 Other Poetries by H.M. Salman Amin »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City