میرے ہاتھوں کی لکیروں میں

Poet: کاشف انجم
By: Kashif Anjum, shujabad (Multan)

کہیں دیکھومیرے ہاتھوں کی لکیروں میں
کیا لکھا ہے وہ آئے گا میری تعبیروں میں

خاموش لب اور ٹھرتی سانسیں کہتی ہیں
ہم ہیں بندھے تنہائی کی زنجیروں میں

کیا ہو اگروہ میرے پاس نہیں یارو
ساتھ تو ہے دیکھو میری تحریروں میں

توڑگیا ناطہ وہ میری دنیا سے
یہ کہتے ہوئے کہ تم ہو فقیروں میں

ایسے چل رہا ہے زندگی کا سلسلہ
شامل ہو جیسے بھٹکے راہ گیروں میں

چھوڑدیا سپنوں کی دنیا میں جانا
آئو بنائیں انجم کو تصویروں میں
 

Rate it:
21 Jan, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Kashif Anjum
Visit 10 Other Poetries by Kashif Anjum »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City