پاس ہے جو اُسی میں گزارا کرے

Poet: Naveed Ahmed Shakir
By: Naveed Shakir, Faisalabad

پاس ہے جو اُسی میں گزارا کرے
اور دل بھی بھلا کیا ہمارا کرے

آج ہے ہر کسی کو تری آرزو
کوئی چارا بھی اب کیا بیچارا کرے

سب ہے تیری محبت کی نظرو کرم
جان نکلے تُو جب بھی اشارا کرے

دیکھنے والوں کی جان خطرے میں ہے
خود کو اتنا نہ اب وہ سنوارا کرے

عشق سے بچ گئے تو بچے ہی رہو
جو ہے کمزور دل کا کنارا کرے

لوگ شاکر ترے آرزو مند ہیں
کوئی یہ بات کیسے گوارا کرے

Rate it:
11 Jun, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Naveed Shakir
Do Poetry and like poetry.. View More
Visit 45 Other Poetries by Naveed Shakir »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City