کسی کو راہ میں چھوڑ جانا، اچھا نہیں ہوتا

Poet: Syed Farrukh Imdad
By: Syed Farrukh Imdad, Lahore

کسی کو راہ میں چھوڑ جانا، اچھا نہیں ہوتا
یوں بستے گھر کو توڑ جانا، اچھا نہیں ہوتا

اگر میں کہوں تو خزاں میں بھی پھول کھل جائیں
مگر قدرت کو ایسے ستانا، اچھا نہیں ہوتا

دعاوءں سے وہ لوٹ تو آئے گا لیکن
دریاوءں کو الٹا بہانا، اچھا نہیں ہوتا

ہلچل مچا دیتی ہے تیری شوخ سی ادا
کلائی میں کنگن گھمانا، اچھا نہیں ہوتا

لوگ کرتے نہیں عزت بد زبان کی
ہر بات میں ٹانگیں اڑانا، اچھا نہیں ہوتا

کیوں کرتے ہو ہر بات میں جلدی تم فرخ
کرہ ء ارض کو تیز گھمانا، اچھا نہیں ہوتا
 

Rate it:
28 Aug, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Farrukh Imdad
Visit 12 Other Poetries by Syed Farrukh Imdad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City