ہمارے رابطوں کو ہی مٹانا کوئی چاہتا ہے

Poet: مرید باقر انصاری
By: مرید باقر انصاری, میانوالی

ہمارے رابطوں کو ہی مٹانا کوئی چاہتا ہے
ہمیں آپس میں کیوں آخر لڑانا کوئی چاہتا ہے

جدا کر کے ہمیں اک دوسرے یوں ناجانے کیوں
ہمیں رسوائیوں کے دن دکھانا کوئی چاہتا ہے

وہ تجھ سے دور کرتا جا رہا ہے مجھ کو آۓ دن
میرے دل میں جگہ تیری پہ آنا کوئی چاہتا ہے

میری تصویر کو ہی چومتا رہتا ہے ہر لمحہ
تیری مانند مجھے پھر سے دیوانہ کوئی چاہتا ہے

میرے وہم و گماں سے تیری یادوں کو مٹا کر کے
میرے دل پہ ہی قبضہ اب جمانا کوئی چاہتا ہے

میرے شعروں سے باقر تیری خوشبو کو ناجانے کیوں
مٹا سکتا نہیں ہے پر مٹانا کوئی چاہتا ہے

Rate it:
10 Apr, 2015

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: مرید باقر انصاری
Visit 213 Other Poetries by مرید باقر انصاری »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City