ہم اپنے گھروں سے نکالے گئے ہیں

Poet: Shahzad anwar khan
By: Shahzad anwar khan, Sailani nagar,akola,maharashtra,India

کرم پر کرم کرنے والے گئے ہیں
ہم اپنے گھروں سے نکالے گئے ہیں

چلائی نہیں مشنری بجلیوں پر
بنایا ہے کھانا سبھی لکڑیوں پر
نہ ٹی-وی ،نہ ہیٹر میرے پاس میں ہے
نہ پنکھانہ کولر میرے پاس میں ہے

لگاتار بل گھر میں ڈالے گئے ہیں
ہم اپنے گھروں سے نکالے گئے ہیں

میری زیست پل پل میں بکھری پڑی ہے
جو ہے پاس بی-اے کی ڈگری پڑی ہے
نہ سروس ملے ہے سوا روپئے کے
نہ کوئی چلے ہے ہوا روپئے کے

اب امّید کے سب اجالے گئے ہیں
ہم اپنے گھروں سے نکالے گئے ہیں

سلامت رہے اے خدا چھت میری یہ
شکستہ مکاں ہی وراثت میری یہ
اتی کرم والوں نے گھر بار توڑا
یہ پھٹ پات کا سارا بازار توڑا

غریبوں کے منہ سے نوالے گئے ہیں
ہم اپنے گھروں سے نکالے گئے ہیں

Rate it:
14 Feb, 2013

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: shahzad anwar khan
I am a Teacher in Zakir hussian urdu School
my qualification is M.A.B.ed
.. View More
Visit 126 Other Poetries by shahzad anwar khan »

Reviews & Comments

قا بل مبارک باد تمہاری شاعری سماج کی صحیح عکا سی کرتی ہے صبور سر بارسی ٹاکلی

By: abdulsuboorkhan, barsi takli on Nov, 26 2013

یہ سماجی عکاسی ہے صاحب بہت بہت شکریہ آپ نے ہمارے ہنر کی قدر کی شکریہ

By: Shahzad anwar khan, akola,maharashtra,India on Feb, 15 2013

bhut achi tasweer kashi kee hai society ki...daad wasool akrain

By: ابّو من و سلویٰ , Islamabad on Feb, 14 2013

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City