بہت آئیں گے سمجھانے نہ رونا

Poet: Mazhar Iqbal SamarBy: Mazhar Iqbal Samar, Sattarpura-Kharian city

بہت آئیں گے لوگ سمجھانے نہ رونا
بناتے ہیں سب ہی افسانے نہ رونا

وہ آزما کر بھی راضی نہیں ہے
جو ہم بھی لگے آزمانے نہ رونا

بہت بیتاب ہونگے آنکھوں میں آنسو
مگر تم کسی بھی بہانے نہ رونا

پی کر جام فرقت ہم جا رہے ہیں
ساقی تم نہ رونا مےخانے نہ رونا

بہت ہنس لئے تم اب جا رہا ہوں
ہمیں یاد کر کے زمانے نہ رونا

چلن ہے یہاں کا سب ساتھ چھوڑیں
جو ٹوٹے یارانے پرانے نہ رونا

میں برسوں سے پیاسا اور ہیں چند قطرے
میرے لب پہ آ کر پیمانے نہ رونا

جس راہگزر پہ چلا ہے تو مظہر
کٹھن تو ہے پر دیوانے نہ رونا

Rate it:
Views: 13710
15 Feb, 2008