!!هاتھ ملانے کی بات کرتے هیں

Poet: سیده سعدیه عنبر جیلانی
By: سیده سعدیه عنبر جیلانی, فیصل آباد, پنجاب , پاکستان

ہاتھ ملانے کی بات کرتے ہیں
غم بھلانے کی بات کرتے ہیں

اب سن کے بھی ہم نہیں سنتے
سب رولانے کی بات کرتے ہیں

تم محبت کی بات رہنے دو
دل جلانے کی بات کرتے ہیں

ڈھونڈتے ہیں مل کے تعبیریں
مقدر آزمانے کی بات کرتے ہیں

بھلا کے حالات کی تلخی ہم بھی
آج مسکرانے کی بات کرتے ہیں

وہ جو کرتے ہیں وفا کے دعوے
دل کے بہلانے کی بات کرتے ہیں

اب کے تجدید ء وفا کیا کرنی
اب تو رسمن نبھانے کی بات کرتے ہیں

یہ بھی شاید کہ اداء ہو ان کی
کریں تو ستانے کی بات کرتے ہیں

کہو تم بھی کچھ کہیں ہم بھی
بات سے بات بنانے کی بات کرتے ہیں

بہت مفلس سا ہو جاتے ہیں عنبر
تمہیں جب بھلانے کی بات کرتے ہیں

Rate it:
02 Mar, 2016

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: سیده سعدیه عنبر جیلانی
Visit 735 Other Poetries by سیده سعدیه عنبر جیلانی »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City