کورونا وائرس کراچی پہنچ گیا، سندھ بھر میں ہنگامی حالت

پاکستانی وزیر اعظم کے مشیر صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے بدھ 26 فروری کو تصدیق کی کہ ملک میں کورونا وائرس کے دو کیسز سامنے آئے ہیں۔ کورونا وائرس سے متاثرہ ایک شخص کا تعلق اسلام آباد جبکہ دوسرے کا کراچی سے ہے۔ ڈاکٹر ظفر مرزا نے اپنی ٹوئیٹ میں لکھا کہ دونوں افراد کی صحت مستحکم ہے اور یہ کہ ان کی مناسب دیکھ بھال کی جا رہی ہے اور یہ کہ اس حوالے سے پریشانی کی کوئی بات نہیں۔

کراچی میں ایک شخص میں کورونا وائرس کی تصدیق کے بعد صوبہ سندھ کے تمام ہسپتالوں سمیت بلدیہ عظمٰی کے تمام ہسپتالوں میں بھی ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے۔ محکمہ صحت سندھ نے ایران سے کراچی پہنچنے والے پانچ سوسے زائد شیعہ زائرین کی فہرست مرتب کرلی ہے۔ یہ فہرست حکومت سندھ نے ایئرپورٹ امیگریشن حکام سے حاصل کی ہے۔ نگران افسران کے ذریعے ان زائرین کے نمونے لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ آج سے سرویلینس ٹیم گھروں پر جا کر خون کے نمونے حاصل کر ے گی۔ ان تمام افراد کے طبی ٹیسٹ کرانےکے لیے آج جمعرات سے مہم شروع کی جا رہی ہے۔ وزیر اعلٰی سندھ مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ فروری میں جو لوگ ایران سے آئے ہیں ان کی نگرانی کی جائے گی۔

محکمہ صحت سندھ کے مطابق کورونا وائرس کے لیے کراچی شہر کے چار ہسپتالوں سمیت سندھ کے نوہسپتالوں میں آئسولیشن وارڈ قائم کر دیے گئے ہیں۔ محکمہ صحت کے ترجمان کے مطابق کراچی کے آغا خان ہسپتال سمیت جناح ہسپتال، ڈاؤ میڈیکل ایوجھا کیمپس، سول ہسپتال اور لیاقت یونیورسٹی ہسپتال کے علاوہ حیدرآباد میں پی ایم سی ایچ نواب شاہ، سول ہسپتال میر پور خاص، جی ایم ایم ایم سی سکھر ہسپتال اور سی ایم سی ایچ لاڑکانہ ہسپتال میں کورونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کے علاج کا انتظام کیا گیا ہے۔

حکومت سندھ کے دعوے اپنی جگہ لیکن کراچی کی حد تک تو صورت حال پریشان کن ہے۔ میڈیکل اسٹورز پر پانچ روپے میں فروخت ہونے والا ماسک ناپید ہوچکا ہے۔ میڈیکل اسٹور مالکان کے مطابق ماسک گزشتہ برس دسمبر میں چین میں کرونا وائرس کے نمودار ہونے کے بعد سے ہی کم یاب ہونا شروع ہوگئے تھے اور پھر ان کی دستیابی صرف اسپتال کےعملے اور پیرا میڈیکل اسٹاف تک رہ گئی تھی۔


 

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.