کمبوڈیا میں شارک کے تین ہزار پروں کو سمگل کرنے کی کوشش ناکام

image

کمبوڈیا کے حکام نے شارک مچھلیوں کے ہزاروں فِنز یا پروں کو ہانگ کانگ سمگل کیے جانے سے پہلے قبضے میں لے لیا ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق وزارت ماحولیات کی سربراہ کیرولینا اوروتیا نے کہا کہ ’تین ہزار 493 شارک فِنز اور 117 کلو مچھلی کے بلیڈرز کو ہانگ کانگ سمگل کیا جا رہا تھا۔‘

شارک فِنز کا پکڑے جانا اس کی بڑھتی ہوئی طلب کو ظاہر کرتا ہے۔ شارک فِنز کو چین کے کچھ شادی ہالز میں ایک ڈش کے طور پر پیش کیا جاتا ہے اور اپنے تئیں یہ سمجھا جاتا ہے کہ یہ ایک دوا کی طرح کام کرتے ہیں۔

یہ فِنز نو سو سے ایک ہزار شارکس سے اتارے گئے جن کی لمبائی پانچ میٹر تک تھی۔ یہ بگوٹا کے ایئرپورٹ ایل ڈراڈو سے پکڑے گئے۔

وزیر ماحولیات نے کہا کہ یہ فِنز مچھلیوں کے غیر قانونی شکار کے دوران اتارے گئے اور انہوں نے اس کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ’اس سے کمبوڈیا کے میرین ایکو سسٹم کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا۔‘

ان کے مطابق اس معاملے کی مزید تحقیقات نیشنل پولیس کرے گی۔

 کمبوڈیا شارک کی پانچ سو میں سے 76 اقسام کا گھر ہے اور یہاں 2020 سے اس کے شکار پر پابندی ہے۔

ہانگ کانگ میں شارک کے پروں کی تجارت اور انہیں کھانے پر پابندی نہیں ہے، لیکن اس کے لیے لائسنس ہونا ضروری ہے۔ کئی برسوں سے اس کے خلاف مہم چل رہی ہے مگر پھر بھی یہ ڈش مقبول ہے۔

انڈسٹری کی سطح پر کیے جانے والے شکار اور ان کے پر اتارنے کی وجہ سے گذشتہ کچھ دہائیوں میں شارک کی آبادی میں کمی واقع ہوئی ہے۔


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
عالمی خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.