ریپ کے مجرم کو نامرد بنانا غیراسلامی قرار

image

اسلامی نظریاتی کونسل نے ریپ کے مجرم کو سزا کے طور پر نامرد بنانے کی مخالفت کردی ہے ۔

اسلامی نظریاتی کونسل کا 225 واں دو روزہ اجلاس منعقد ہوا جس میں فوج داری قانون (ترمیمی) آرڈیننس 2020ء کے تحت ریپ کے مجرم کی آختہ کاری یعنی نامرد بنانے کے قانون کو غیر اسلامی قرار دیا اور رائے دی کہ اس کی جگہ متبادل مؤثر سزائیں تجویز کی جائیں۔

یاد رہے کہ گزشتہ برس ستمبر میں حکومت نے ریپ کے مجرموں کو نامرد بنانے کا قانون لانے کا فیصلہ کیا تھا، وزیراعظم عمران خان نے ایسے مجرموں کو نامرد بنانے کے لیے قانون کی منظوری دی تھی جس کے بعد وفاقی وزیر فیصل واوڈا نے بل کے ڈرافٹ پر کام شروع کردیا تھا ۔

اسلامی نظریاتی کونسل کے اجلاس میں تعلیمی اداروں میں عربی لازم کرنے کے بل 2020ء کی تائید کرتے ہوئے کونسل نے قرار دیا کہ عربی زبان کی تدریس کے لیے اقدامات کرنا دینی اور آئینی تقاضا ہے، کونسل نے یہ بھی تجویز دی کہ ثانوی تعلیمی اداروں میں بطور اختیاری مضمون فارسی ، ترکی اور چینی زبان کو بھی نصاب میں شامل کیا جائے۔

کونسل نے ائمہ کرام سے بھی اپیل کی کہ وہ مساجد میں ماحولیات اور شجرکاری کے حوالے سے خطبات جمعہ اور دروس میں اسلامی تعلیمات بیان کریں۔


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
پاکستان کی خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.