آج بت خانے سے ہم سوئے حرم نکلے ہیں

Poet: Hasan Shamsi
By: F.H.SIDDIQUI, Karachi

آزمانے کے لئے اس کا کرم نکلے ہیں
آج بت خانے سے ہم سوئے حرم نکلے ہیں

کیسے تخلیق ہوئی، بعد اجل کیا ہو گا
ان سوالوں ہی سے سب دین و دھرم مکلے ہیں

غلبہ تھا ذہن پہ رنگین سے کچھ خوابوں کا
عشق میں ڈوبے تو اب سارے بھرم نکلے ہیں

کھائے ہیں اہل زباںخوف ستم گر کتنا
لب بھی خاموش ہیں، کاغذ نہ قلم نکلے ہیں

ضد ہے اس یار کو ہرگز نہ اٹھائے گا نقاب
کھا کے دیدار کی پر ہم بھی قسم نکلے ہیں

فخر سے قوت باطل کو کیا ہے مفلوج
جب ذرا سر پہ کفن باندھ کے ہم نکلے ہیں

پلٹے اوراق ذرا آج جو کچھ ماضی کے
ہر ستم ان کے ‘حسن‘ دل پہ رقم نکلے ہیں

Rate it:
11 May, 2017

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: F.H.SIDDIQUI
*Social science teacher and trainer

.. View More
Visit 158 Other Poetries by F.H.SIDDIQUI »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City