اک شعر اس ادا سے تمھیں لکھنا ہوگا

Poet: بلبل سفیر)بختاور شہزادی)
By: BAKHTAWAR SHEHZADI, GUJRAT

چاہی ہیں جدائیاں تو دے دیں گے تمہیں
بھلے ہی تم پہ سبھی وارنا ہوگا
بس اک خواہش ہے اسے وصیت سمجھو
عاجز قلم کو آنسوؤں میں بھگو کے تمھیں
جدائیوں کے صفحات پہ یوں لکھنا ہوگا
تیری چاہت تو ہے لوٹ کے نہ آنا مگر
وہی درد, ہجر کا مجھے بھی سہنا ہوگا
وہ درد جو راتوں کو میں سہا کرتا تھا
بس آشنا فقط اُس درد سے تجھے ہونا ہوگا
آنکھوں میں نمی, ہونٹوں پہ خوشی لے کے
بھری محفل چھوڑ کے تنہائیوں میں جانا ہوگا
کوئی پوچھے تو یہی بات کہنی ہوگی
روسکتی نہیں پر سبھی سہنا ہوگا
جس درد سے دعاؤں میں مانگا کرتے تھے تجھے
اُس درد سے اِسی دعا کو طلب کرنا ہوگا

Rate it:
17 Mar, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: BAKHTAWAR SHEHZADI
Visit Other Poetries by BAKHTAWAR SHEHZADI »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City