اے کاش دوستی دشمن سے کرلیتے ہم

Poet: بلبل سفیر)بختاور شہزادی)
By: BAKHTAWAR SHEHZADI, GUJRAT

کم سے کم بدلنے پہ زارو قطار نہ روتے ہم
تجھے یاد ہے چلو اب کروا دیتے ہیں ہم
کہ دل جب ٹوٹا تھا تو کیسے ٹوٹے تھے ہم
گر یاد ہو تو فقط بھولنے کا تقاضا کیا اس نے
کیسے بھولیں یہ تقاضا اگر بھول گئے ہیں ہم
مت پوچھو سوالوں کی عادت ڈالی کس نے
سولوں کے باوجود جن سے سوال نہ کیا کرتے تھے ہم
آئینے میں دیکھتے تھے کے بکھر گئے ہیں ہم
اتنی شدت سے پکارتے ہیں کے ٹوٹ جائیں ہم
تیری بے وفائی کی سزا کچھ یوں دیں گے ہم
دروازے پہ قفل نہ ہو گا مگر آنے نہ دیں گے ہم
کہا تھا نہ اے کاش وقت تھم جائے
کہ غلطی سنوار لو تم,اور خود کو سنوار لیں ہم

Rate it:
17 Mar, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: BAKHTAWAR SHEHZADI
Visit Other Poetries by BAKHTAWAR SHEHZADI »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City