بہار میں کِھلے تھے پھول خار کے جیسے

Poet: UA
By: UA, Lahore

بہار میں کِھلے تھے پھول خار کے جیسے
لگا کرتے تھے اجالے غبار کے جیسے

یہ کیسا انقلاب آیا ہے میرے آنگنن میں
حیات جی اٹھی نظر اتار کے جیسے

کَھلے ہیں پھول خزاں میں بہار کے جیسے
صبا لے آئی ہو انہیں پکار کے جیسے

ہر اِک ڈالی نے اوڑھ لی قبا شاداب رنگیں
کوئی لے آیا ہو انہیں سنوار کے جیسے

سیکھا یا زندگی نے زندگی جینے کا ہنر
بَسر ہوئی ہے زندگی گزار کے جیسے

Rate it:
07 Feb, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: uzma ahmad
sb sy pehly insan phr Musalman and then Pakistani
broad minded, friendly, want living just a normal simple happy and calm life.
tmam dunia mein amn
.. View More
Visit 3206 Other Poetries by uzma ahmad »

Reviews & Comments

یہ کیسا انقلاب آیا ہے میرے آنگن میں
حیات جی اٹھی نظر اتار کے جیسے

سیکھا یا زندگی نے زندگی جینے کا ہنر
بسر ہوتی تھی جو پہلے گزار کے جیسے

By: Uzma, Lahore on Feb, 16 2020

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City