بے یارو مدد گار ہوئے پھرتے ہیں

Poet: Sajid Bin Zubair
By: Sajid Bin Zubair, Bahawalnagar

بے یارو مدد گار ہوئے پھرتے ہیں
راہِ عشق میں یارو ہم خوار ہوئے پھرتے ہیں

کبھی چُوم کر سجائے جاتے تھے سَر آنکھوں پر
اَب گلی گلی بازار ہوئے پھرتے ہیں

تول دیا عِشق نے بے مُول کر کے
جیسے تکڑی تکڑی میں اَخبار ہوئے پھرتے ہیں

روز کھلتے ہیں گُل رنگ برنگے بہاروں میں
ہم ہیں کہ ہر موسم میں اَشکبار ہوئے پھرتے ہیں

میری عاجزی بھی کچھ کام نہ آسکی
ہم عاجز بندے مولا تیرے گنہگار ہوئے پھرتے ہیں

بَھٹکے ہوئے ہم صِراط مُستقیم سے
ہجرِ آتش کے اَنگار ہوئے پھرتے ہیں

یوں کھایا عشقِ دیمک نے دامن کو میرے ساجد
جزائے محبت میں پُر اِسرار ہوئے پھرتے ہیں

Rate it:
25 Feb, 2020

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Sajid Bin Zubair
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City