تھے آنسو مری چشم تر میں بہت

Poet: Hasan Shamsi
By: F.H. Siddiqui, Lucknow ( India )

نہ آئے اگرچے نظر میں بہت
تھے آنسو مری چشم تر میں بہت

تھا مطلب ترے نقش پا سے فقط
“ نشاں یوں تو تھے رہگزر میں بہت

مجھے بھا گئی بس تری سادگی
حسیں ورنہ آئے نظر میں بہت

ہو گر بارگاہ خدا میں قبول
تو اک سجدہ ہے عمر بھر میں بہت

عزائم کے بل پر اڑانیں بھریں
نہ تھا گرچہ دم بال و پر میں بہت

نہیں دور تک ساتھ چل سکے ہم
انا تھی مرے ہمسفر میں بہت

وہ اشک ندامت نہ ہلکا پڑا
اسے تولا لعل و گہر میں بہت

پھر آنگن میں دیوار اٹھ جائے گی
کہ اب کینہ سازی ہے گھر میں بہت

سفر عا شقی کا مبارک ‘ حسن ‘
ہیں پر خار اس رہ گزر میں بہت

Rate it:
31 Jan, 2015

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: F.H.SIDDIQUI
*Social science teacher and trainer

.. View More
Visit 158 Other Poetries by F.H.SIDDIQUI »

Reviews & Comments


ہو گر بارگاہ خدا میں قبول
تو اک سجدہ ہے عمر بھر میں بہت

Nice

By: Arsalan Hussain, Ajman,UAE on Feb, 01 2015

شکریہ محترم ارسلان حسین صا حب ۔ خوش رہئے
By: F.H.SIDDIQUI, Lucknow on Feb, 03 2015
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City