جب سے کرونا نے طوفان مچا رکھا ہے

Poet: سرور فرحان سرور
By: Sarwar Farhan Sarwar, Karachi

جب سے کرونا نے طوفان مچا رکھا ہے
موت کے خوف نے بس گھر میں بٹھا رکھا ہے

کس طرح جان سکیں گے ہم کسی کا باطن؟
نقاب ہر شخص نے چہرے پہ سجا رکھا ہے

فیس بک، واٹس ایپ، ٹک ٹاک ہو یا انسٹا ہو
سب نے کورونا کو سینے سے لگا رکھا ہے

گھر سے باہر نہیں جاؤ کہ بہت خطرہ ہے
جیسے کورونا نے کوئی جال بچھا رکھا ہے

اب نہ وہ دوستوں کی بزم ہے، نہ کرکٹ ہے
'چیل اڑی، چڑیا اڑی' نے دل بہلا رکھا ہے

وہ جو کہ رات گئے گھر کی خبر لیتے تھے
ان دلیروں نے بھی باہر کو بھلا رکھا ہے

جن کے درشن سے عشاق جیا کرتے تھے
ان حسینوں نے بھی چہروں کو چھپا رکھا ہے

کل کسی کو بھی خبر کب تھی کسی اپنے کی؟
آج بس فون نے ان سب سے ملا رکھا ہے

سبزیاں کاٹ لوں؟ یا گھر کا کوئی کام کروں؟
لیکن گھر والوں نے کاہل ہی بنا رکھا ہے

گفتگو کس سے ہو؟ کون سنے گا سرور؟
تونے ہر شخص کو ہر لحظہ خفا رکھا ہے

Rate it:
03 Apr, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Sarwar Farhan Sarwar
I have been teaching for a long time not because teaching is my profession but it has been a passion for me. Allah Almighty has bestowed me success i.. View More
Visit 95 Other Poetries by Sarwar Farhan Sarwar »

Reviews & Comments

Excellent poetry. Even excellent choice of words. Well done keep it .

By: shah Nawaz Bokhari, Rawalpindi on Apr, 07 2020

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City