جیسے مِثل سَرفرازی ، أسماں سے ہے

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

جیسے مِثل سَرفرازی ، أسماں سے ہے
زُباں میں یہ مثال اُردو ، زُباں سے ہے

ادیب و مُصنف ہوں یا اربابِ سُخن ہوں
سب گُلوں میں رنگ اسی ، گلُستاں سے ہے

ہر مذہب کو جگہ دی اردو کے چمن نے
کب اس کا تعلق صرف ، مُسلماں سے ہے

یہ مِٹنے کی نہیں لاکھ زور لگا لو
فیض حاصل اِسے نظامی ، أستاں سے ہے

جو ضرب لگاٸی وہ اپنوں نے لگاٸی
ربط مرا یوسف ع کی سی ، داستاں سے ہے

تم مرے مسکن کی دیواریں نہ اٹھاٶ
اندیشہ مجھے رفیقِ ، أشیاں سے ہے

میں اہم نہیں تو کیوں ہوں نشانے پر
کچھ تو ڈر تجھے اُردو ، زُباں سے ہے

ہے دَستور میں مگر ، مَنشور میں نہیں
شرمندہ ایوان میں یہ سیاست ، داں سے ہے

” اخلاق “ اردو میں یہ جو رمق دوڑ رہی ہے
کچھ صاحبِ شوق کچھ صاحبِ ، ایماں سے ہے

Rate it:
10 May, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 113 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City