خواب

Poet: Sana Arif
By: Sana Arif, Abbotabad

حالات کے کچے دھاگوں میں کچھ خواب ادھورے ہوتے ہیں
ہم سب بچپن سے ہی جن کو آنکھوں میں پِروتے رہتے ہیں

سپنوں کی دِلکش وادی میں کبھی چاند میں کھوۓ رہتے ہیں
ہم سب بچپن سے ہی جن کو آنکھوں میں پِروتے رہتے ہیں

پھر بچپن کے وہ خواب لیے حسرت سے بھرے جذبات لیے
دنیا کی کٹھِن اِن راہوں میں اِک آس پہ چلتے رہتے ہیں

اُمید کے دامن کو پکڑے منزل کی طرف جب بڑھتے ہیں
تو دل میں زندہ خوابوں کے مرنے سے ڈرتے رہتے ہیں

پھر چلتے ہوۓ اِن راہوں پر کبھی پھول مِلے کبھی خار مِلے
کبھی اُونچی نیچی راہوں کو ہموار ہی کرتے رہتے ہیں

منزل کی لگن خوابوں میں مگن ہم جگ سے جب ٹکراتے ہیں
تو ٹوٹ کے سپنے آنکھوں سے آنسوؤں میں بہتے جاتے ہیں

سپنوں سے نِکل کر پھر آخر احساس ہمیں یہ ہوتا ہے
جب ٹوٹ کے کِرچی ہوتے ہیں یہ خواب تبھی کہلاتے ہیں

Rate it:
12 Sep, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Sana Arif
Visit 3 Other Poetries by Sana Arif »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City