دوسری سمت سے ہوتا جو نمودار کوئی

Poet: راشد علی مرکھیانی
By: Rashid Ali Markhiani, Larkana

دوسری سمت سے ہوتا جو نمودار کوئی
عین ممکن تھا نظر آتا مرے یار کوئی

آخری بار کے دھوکے میں مسلسل مجھ کو
توڑ دیتا ہے، بناتا ہے کئی بار کوئی

یہ مری آنکھ کا دھوکہ ہے، نیا کچھ بھی نہیں
مجھ سے پہلے بھی نبھاتا تھا یہ کردار کوئی

تجھ کو چاہا تھا مگر تو بھی میسر نہ ہوئی
زندگی! تجھ سے بھلا کیوں نہ ہو بیزار کوئی

میں کہ دیتا ہوں بہت مان سے دستک خود پر
کھینچ لاتا ہے بہت دور سے دیوار کوئی

خواب ٹوٹیں تو اذیت کا سبب بنتے ہیں
تو دعا کر کہ کبھی ہو ہی نہ بیدار کوئی

جس کی نسبت سے محبت کی بقا ہے راشد
اس کو رکھنا ہی نہیں مجھ سے سروکار کوئی

Rate it:
16 Nov, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Rashid Ali Markhiani
Visit Other Poetries by Rashid Ali Markhiani »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City