رفائے الفت

Poet: راوء محمد ابوہریرہ
By: Muhammad Abuhuraira, Muzaffargarh

انجام بھلا نہ ہو تو آغاز کہاں کا
کچھ قرض نہیں اب روئے فساں کا

بیٹھے ہی بٹھائے دیا فتویٰ,کفر
جو پاک مسلماں تھا پیام قرآں کا

رفائے الفت کو توڑا ہے بےدردی سے انھوں نے
جو رکھتے تھے فقط علم عیاں کا

تشن و تنقید لازم ہے پنپنے کے لیے
جو سمیٹے ہے راز, راز پنہاں کا

غلط فہمی ہی تھی کیا وجہء ہجر
یا فقط خوف تھا نقطہ بندوزماں کا

چھوڑا جنہوں نے ہمیں , سایہ غیر کی خاطر
نچھاور کیے دیتے تھے ان پر , ہر لفظ سماں کا

اک دید میسر تک نہ ہویء کوچہ یار میں
مگر شوق اجاگر ہے تلک طرز, برہاں کا

گلہ کرتے ہیں وہی اس نفس روی کا
جنیہں اعتبار نہ ہو خود اپنی ہی زباں کا

خیر وہ دوستی تو اب نصیب, دشمناں ہوئی
وہ لطف بھی گیا حیات, سواں کا

ہریرہ یہ کاینات مجموعہء دہریا ہے سوچ ذرا
یہاں مول نہیں تیرے خوش بخت گماں کا

Rate it:
18 Oct, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Abuhuraira
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City