زمیں نہ ہوتی کہیں اور نہ آسماں ہوتا (٢)

Poet: UA
By: UA, Lahore

اگر نہ ایک خَدا خالقِ جہاں ہوتا
زمیں نہ ہوتی کہیں اور نہ آسماں ہوتا
رہنما آدمی کا جو نہیں خَدا ہوتا
کہیں مکیں نہ ہوتے نہ کہیں مکاں ہوتا
جو رب کی ذات کا جلوہ نہیں عیاں ہوتا
بشر بھی اپنے آپ سے ہی خود نہاں ہوتا
میرا ہونا نہ ہونا ایک تیرے دم سے ہے
تیرا وجود نہ ہوتا تو میں کہاں ہوتا
نہ جانے کس جگہ ہوتا جو نہ یہاں ہوتا
میں آج ہوں جہاں شاید نہیں وہاں ہوتا
جو تیری رحمتیں ہم پہ نہ وا ہوئی ہوتیں
تیری ہستی کا راز کیسے پھر عیاں ہوتا
تیری عطاوؤں کا در جو نہ مجھ پہ وا ہوتا
تیری ثنا ء سے کیا واقف میرا دِہاں ہوتا۔۔؟
تیرا پرتو اگر نہیں یہاں وہاں ہوتا
توحسن کائنات میں بھلا کہاں ہوتا
اگر نہ ایک خَدا خالقِ جہاں ہوتا
زمیں نہ ہوتی کہیں اور نہ آسماں ہوتا
 

Rate it:
27 Nov, 2012

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: uzma ahmad
sb sy pehly insan phr Musalman and then Pakistani
broad minded, friendly, want living just a normal simple happy and calm life.
tmam dunia mein amn
.. View More
Visit 3425 Other Poetries by uzma ahmad »

Reviews & Comments

‘رہنما آدمی کا جو نہیں خَدا ہوتا‘

تیسرا مصرعہ اس طرح کردیں
شکریہ

By: UA, Lahore on Nov, 30 2012

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City