سراسر بے وقوفی ہے

Poet: عائشہ قصوری
By: Ayesha kasuri, Wah

سنو اے دنیا والوں
بڑا ہی ناز کرتے ہو
رسموں پر
رواجوں پر
محبت مر بھی جائے تو
کوئی فرق نہیں پڑتا
عزت بس رہے باقی
یہی قانون ہے افضل
قتل کرتے ہو محبت کا
غیرت کے نام پر صاحب
بڑا اَکڑتے پھرتے ہو
روایتوں پر
قسموں پر
سنو! میں عرض کرتی ہوں
محبت مر بھی جائے تو
مردہ ہو نہیں سکتی
قتل کردو اگر اِسکا
رسوا ہو نہیں سکتی
ہمیشہ زندہ رہتی ہے
ہر طوفان سہتی ہے
جب اپنی پر آجائے
پل میں خاک کرتی ہے
سنو اے دنیا والوں
بڑا غرور کرتے ہو
مگرتم جان نہیں سکتے
محبت تیز دریا ہے
لہریں غضب ڈھاتی ہیں
قہر سے کیوں نہیں ڈرتے؟
بہا لے جائے رسموں کو
نگل جائے یہ قسموں کو
اِسے ہلکا نہ تم لینا
سَراسر بے وقوفی ہے
سنو اے دنیا والوں
میں نے عرض کر دیا
رسموں پر، رواجوں پر
جو تم ناز کرتے ہو
سَراسر بے وقوفی ہے

Rate it:
22 Sep, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ayesha kasuri
Visit Other Poetries by Ayesha kasuri »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City