سرشت

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

تجھے میں چھوڑ دوں یہ سوچنا حماقت ہے
"مِری سرشت میں دھوکہ نہیں محبت ہے "

میں جانتا تھا وہ اک روز چھوڑ جائے گی
یوں اس کا چھوڑ کے جانا پرانی عادت ہے

ذرا سی دیر کو آیا ہوں سوچتے کیا ہو
مرے نصیب میں ہر روز ایک ہجرت ہے

زمانے بھر کے دکھوں کو سمیٹ لایا ہوں
ملی خوشی نہ کہیں بس یہ ہی شکایت ہے

بچھڑ گیا جو وہ تو بات یہ سمجھ آئی
کسی کا چھوڑ کے جانا بھی اک قیامت ہے

ہمارے پیار کا جادو نہیں چلا اس پر
بھرا زباں میں ہے زہر اور ڈسنا فطرت ہے

ہمیں بلانا نہ محفل میں یہ اجازت ہے
ہمارے نام سے سب کو یہاں شکایت ہے

تمام شکوے گلے آج دور کر دیں گے
چلے بھی آؤ کہ اب دیر تک فراغت ہے
 

Rate it:
06 Mar, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 208 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City