سنو

Poet:
By: Huda Irfan, Karachi

سنو تم نے کبھی ساحل پربکھری ریت دیکھی ہے
سمندر پاس بہتا ہے
مگر اسکے مقدر میں ہمیشہ پیاس رہتی ہے
سنو تم نےکبھی صحرا میں جلتے پیڑ دیکھے ہیں
سبھی کو چھاؤں دیتے ہیں
مگر انکو صلے میں ہمیشہ دھوپ ملتی ہے
سنو تم نے کبھی شاخوں سے بچھڑے پھول دیکھے ہیں
وہ خوشبو بانٹ دیتےہیں
بکھرے جانے تک لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہوا کا ساتھ دیتے ہیں
سنو تم نے کبھی میلے میں بجتے ڈھول دیکھے ہیں
عجیب المیہ ہے ان کا
بہت ہی شور کرتے ہیں مگر اندر سے خالی ہیں

Rate it:
18 Oct, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Huda Irfan
Visit 2 Other Poetries by Huda Irfan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City