صرف رب کے سامنے خیرات کو محرم رکھو

Poet: Irfan abdi
By: Irfan abdi, Ghazipur

صرف رب کے سامنے خیرات کو محرم رکھو
دوسروں کے سامنے خیرات،نامحرم رکھو

یہ غلط ہے کہ جہاں میں بات اپنی کم رکھو
بات تم جو بھی رکھو اس بات میں کچھ دم رکھو

دل کے آنگن کو کرو تقسیم دو حصوں میں تو
ایک میں شعلہ رکھو تو ایک میں شبنم رکھو

یوں پریشاں کب تلک گزرے ہماری زندگی
غمگساروں آؤ آ کرکے خیالِ غم رکھو

مت چلو اتنا اکڑ کے راہ میں کوچوں میں تم
گر نہ جاؤ اس لئے کہتا ہوں خود کو خم رکھو

شاہرائے عشق پہ رکھو قدم با احتیاط
یہ نہ ہو کہ بعد میں رنج و الم تو غم رکھو

اشک بھی پھوٹے تو ہلچل ہو دلوں کے شہر میں
کیا ضروری ہے مکان چشم میں تم بم رکھو

دیکھ لے تم کو تو دل پتھر کے ہوجائینگے موم
شرط ہے اسکے لئے عرفان آنکھیں نم رکھو

Rate it:
31 Mar, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Irfan abdi
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City