غزل

Poet: اخلاق احمد
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

دُنیا میں جو ، بگاڑ ہے میرا قصور ہے
یہ جو مصیبتوں کا ، پہاڑ ہے میرا قصور ہے

اصلاح کی کبھی سعی کی ہی نہیں میں نے
یہ جتنی بھی مار ، دھاڑ ہے میرا قصور ہے

سب نے سبھی رنگ کے گُل ہیں کِھلاۓ
چمن میں جتنا ، جھاڑ ہے میرا قصور ہے

پرندے تو اب بھی آتے جاتے ہیں بےخطر
سرحدوں پہ یہ جو ، باڑ ہے میرا قصور ہے

فَضا میں سُر سنگیت بلبل کی نَوا سے ہیں
اور جتنی چیخ و ، چنگھاڑ ہے میرا قصور ہے

ہر بندھن میں ربط تمہارے ہی دم سے ہے
رشتوں میں جو ، دراڑ ہے میرا قصور ہے

اخلاق خدا تو منتظر ہے ہر گھڑی وِصال کا
درمیاں جو اب تک ، آڑ ہے میرا قصور ہے

Rate it:
13 Aug, 2020

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 119 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City