قرینہِ راز

Poet: حالم ؔ
By: Durmana Mubarik, Chenabnager

نہ "میں" باقی رہا مجھ میں نا "توں"
وقت نے کچھ یوں ترتیب دیا مجھ کو

زخم اتنے ہے اب بھی مجھ میں باقی
کے درد کا احساس نہ رہا مجھ کو

کہ اب ہجوم آشنامیں بھی لکھ رہا ہوں
وہ اتنا سدھار گیا مجھ کو

میرے دوست مجھ سے جُدا کو رہے ہیں
یہ کہہ کر کہ نا رہا لحاظ مجھ کو

بقول ظفر زندگی ہے چار دن کی
مگر میں تو برسوں رہا ہوں گزار اس کو

قلم اُٹھا کو سوچ رہا ہوں
کیسے کروں الفاظ سے بیاں اُس کو

میں طلبگار ہوں اُس کا اب بھی
یہ راز کس قرینے سے بتاؤں اُس کو

رسمِ دنیا کے مطابق کسی اور کا ہوں میں
مگر اب بھی اس دل میں ہے وہ حالم ؔ،

یہ کیسے سمجھاؤں اُسکو
کیسے سمجھاؤں اُسکو

Rate it:
06 Dec, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Durmana Mubarik
Visit Other Poetries by Durmana Mubarik »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City