میری آنکھوں سے اشکوں کی روانی نہیں جاتی

Poet: Syed Farrukh Imdad
By: Syed Farrukh Imdad, Lahore

میری آنکھوں سے اشکوں کی روانی نہیں جاتی
میرے زہن سے تیری اٹھتی ہوئی جوانی نہیں جاتی

تیرے بعد بھی ابھرتے ہیں، مچلتے ہیں بہت
کمبخت میرے جذبوں کی فراوانی نہیں جاتی

چھوڑ دیا ہے تخت و تاج تیرے لئے مگر
حاکم ہوں لہجے سے حکمرانی نہیں جاتی

ہوئے تھے جسکی خاطر شاہ سے فقیر ہم
خیالوں سے آج تک وہ مہارانی نہیں جاتی

جہاں رہتی ہے بڑا مشکل ہے رستہ بھی وہاں کا
اس طرف تو کوئی گاڑی باآسانی نہیں جاتی

چھوڑا ہے اس نے جب سے مجھے بے وجہ فرخ
اس بے وفا کے دل سے، پشیمانی نہیں جاتی

Rate it:
28 Aug, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Farrukh Imdad
Visit 12 Other Poetries by Syed Farrukh Imdad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City