میں کاغذی پرندوں کے پر بناتا ہوں

Poet: m.asghar mirpuri
By: m.asghar mirpuri, birmingham

میں کاغذی پرندوں کے پر بناتا ہوں
پھر ان کے لیے کوئی شجربناتاہوں

میری طرح جو زندہ دل لوگ ہیں
میں انہیں اپنا ہمسفربناتا ہوں

جو دکھی دلوں کوتسکین بخشیں
اشعار سے ایسےگوہر بناتا ہوں

جن سے ہرآنکھ کو سرور ملے
تخیل سے ایسے منظربناتاہوں

اپنی محبت کا تاج محل بنانا ہے
پہاڑ کاٹ کرسنگ مرمر بناتاہوں

Rate it:
26 Apr, 2014

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: m.asghar mirpuri
Visit 7419 Other Poetries by m.asghar mirpuri »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

ُپہلے وہ کاغذی پھول بناتا ہے -
خیالی خوشبوسے پھر مہکاتا ہے -
جان جوکھوں سے بنا کے تاج محل -
اپنی زندہ محبت اسمیں دفناتا ہے -
آفرین ہے آج کے دور کے انسان پر -
اپنی ھی کاھلی پہ مسکراتا ھے -
جب بھی پوچھا “ مقصد حیات کیا ھے -
وہ اس بات کا جواب دے نہ پاتا ھے -
ہے نا !

By: swera, karachi on Apr, 28 2014

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City